Yaad -e- Maazi. .

کتنی باتیں بھولیں؟ کتنی یاد رکھے؟ کیا کریں؟ کیا نہیں؟

کونسی چاند رات؟ کونسی عید؟ کونسا تہوار؟۔۔۔ لگتا ہے جیسے دل ہی مر گیا ہو۔۔

رات لیٹو تو وہ منظر آنکھوں کے سامنے سے ہٹتے نہیں۔۔، کچھ بھی بھلایا نہیں جاسکتا۔۔

ماں کو تسلی دیتے ہوئے کوشش ہوتی ہے میں نہ روؤں۔۔ پر رات ہوتے ہی۔۔ اکیلے میں خوب چیخ چیخ کر رونے کا دل کرتا ہے۔۔

پر پھر ۔۔ نہیں رو سکتی۔۔

دعا کریں مجھے سکون اور صبر آئے۔۔

یاد ماضی عذاب ہے یا رب، چھین لے مجھ سے حافظہ میرا۔۔۔