سورۃ رحمن (ایک تاثر)۔

اے فنا انجام انسان کب تجھے ہوش آئے گا
تیرگی میں ٹھوکریں آخر کہاں تک کھائے گا
اس تمرد کی روش سے بھی کبھی شرمائے گا
کیا کرے گا سامنے سے جب حجاب اٹھھ جائے گا
کب تک آخر اپنے رب کی نعمتیں جھٹلائے گا؟

یہ سحر کا حسن، یہ سیارگاں اور یہ فضا
یہ معطر باغ، یہ سبزہ، یہ کلیاں دل ربا
یہ بیاباں، یہ کھلے میدان، یہ ٹھنڈی ہوا
سوچ تو کیا کیا، کیا ہے تجھھ کو قدرت نے عطا
کب تک آخر اپنے رب کی نعمتیں جھٹلائے گا؟

خلد میں حوریں تری مشتاق ہیں، آنکھیں اٹھا
نیچی نظریں جن کا زیور، جن کی آرائش حیا
جن و انساں میں کسی نے بھی نہیں جن کو چھوا
جن کی باتیں عطر میں ڈوبی ہوئی جیسے صبا
کب تک آخر اپنے رب کی نعمتیں جھٹلائے گا؟

سبز گہرے رنگ کی بیلیں چڑھی ہیں جا بجا
نرم شاخیں جھومتی ہیں، رقص کرتی ہے صبا
پھل وہ شاخوں میں لگے ہیں دل فریب و خوش نما
جن کا ہر ریشہ ہے قند و شہد میں ڈوبا ہوا
کب تک آخر اپنے رب کی نعمتیں جھٹلائے گا؟

ہھول میں خوشبو بھری جنگل کی بوٹی میں دوا
بحر سے موتی نکالے صاف روشن خوش نما
آگ سے شعلہ نکالا، ابر سے آب صفا
کس سے ہوسکتا ہے اس کی بخششوں کا حق ادا
کب تک آخر اپنے رب کی نعمتیں جھٹلائے گا؟

صبح کے شفاف تاروں سے برستی ہے ضیا
شام کو رنگ شفق کرتا ہے اک محشر بپا
چودھویں کے چاند سے بہتا ہے دریا نور کا
جھوم کر برسات میں اٹھی ہے متوالی گھٹا
کب تک آخر اپنے رب کی نعمتیں جھٹلائے گا؟

یہ نظم فرسٹ ایر کے کورس اردو کی کتاب سے لی گئی ہے اور لکھا جوش ملیح آبادی نے ہے، مجھے بہت ذیادہ پسند ہے! میں نے دعائیں کی تھیں کہ یہی نظم پیپرز میں آئے! اور میری دعا قبول بھی ہوئی تھی :)!۔

Phir kuch likhne ka dil nahi…

Mein mazhrat khuwaah hon ke ajj kal mere pass kuch bhi nahi hai likhne ko.. isiliye ajj kal Shair-o-Shairi share kerne ka dil kar raha hai.. ajj kuch shair aur ghazalain parhi hain, unhi ko share ker rahi hon…

*`*`*`*`*`*`*`*`*`*`*`*`*
Gam mujhe hasarat mujhe vahashat mujhe saudaa mujhe
ek dil deke Khudaa ne de diyaa kyaa kyaa mujhe

hai husuul-e-aarazuu kaa raaz tark-e-aarazuu
mai.n ne duniyaaa chho.D dii to mil ga_ii duniyaa mujhe

[husuul-e-aarazuu=the completion/fulfilment of desire]
[tark-e-aarazuu=to discard desire]
Seemab Akbarabadi
*`*`*`*`*`*`*`*`*`*`*`*`*
hujuum-e-Gam me.n mere saath chal sako to chalo
qadam qadam pe hai mushkil sambhal sako to chalo

hamaare biich hai rasm-o-rivaaj kii diivaar
tum us ko to.D ke aage nikal sako to chalo

ye raah-e-ishq nahii.n aag kaa samandar hai
lapakatii mauj me.n gar tum sambhal sako to chalo

tumhaarii kashti-e-ulfat hai Gam ke tuufaa.N me.n
merii tarah ruKh-e-tuufaa.N badal sako to chalo
–Unknown
*`*`*`*`*`*`*`*`*`*`*`*`*
badalaa na apane aap ko jo the vahii rahe
milate rahe sabhii se magar ajanabii rahe

duniyaa na jiit paao to haaro na Khud ko tum
Tho.Dii bahut to zahan me.n naaraazagii rahe

apanii tarah sabhii ko kisii kii talaash thii
ham jisake bhii qariib rahe duur hii rahe

guzaro jo baaG se to duaa maa.Ngate chalo
jisame.n khile hai.n phuul vo Daalii harii rahe
–Nida Fazli
*`*`*`*`*`*`*`*`*`*`*`*`*
Gam kii baarish ne bhii tere naqsh ko dhoyaa nahii.n
tuune mujh ko kho diyaa mai.n ne tujhe khoyaa nahii.n

[naqsh = mark]

niind kaa halkaa gulaabii-saa Khumaar aa.Nkho.n me.n thaa
yuu.N lagaa jaise vo shab ko der tak soyaa nahii.n

[Khumaar = intoxication]

har taraf diivaar-o-dar aur un me.n aa.Nkho.n kaa hujuum
kah sake jo dil kii haalat vo lab-e-goyaa nahii.n

[hujuum = crowd; lab-e-goyaa = lips that can speak]

jurm aadam ne kiyaa aur nasl-e-aadam ko sazaa
kaaTataa huu.N zindagii bhar mai.n ne jo boyaa nahii.n

[aadam = Adam; nasl-e-aadam = mankind]

jaanataa huu.N ek aise shaKhs ko mai.n bhii ‘Munir’
Gam se patthar ho gayaa lekin kabhii royaa nahii.n

[shaKhs = person]
–Munir Niazi
*`*`*`*`*`*`*`*`*`*`*`*`*

زندگی!!۔

کبھی کبھی زندگی میں ایسے موڑ آتے ہیں کہ آپ حیران پریشان بس اسی بارے میں سوچتے رہتے ہو، پر اس بارے میں بات نہیں کرنا چاہتے، بلکل ایسا ہی ابھی میرے ساتھ ہورہا ہے، دل میں کچھ ہے ذہن میں کچھ ہے۔۔ اور زبان ایک ہی بات کرتی ہے، یا اللہ تو مدد کر۔۔ خیر تھوڑا سا اپنے آپ کو پرسکون کرنے کے لئے کچھ اشعار پڑھے تھے وہ پوسٹ کر رہی ہوں۔۔ دعائوں میں یاد رکھنے کی کوشش کیجیے گا پلیز۔۔

مجھے ایسا لطف عطا کیا جو نہ ہجر تھا نہ وصال تھا
میرے موسموں کے مزاج داں تجھے میرا کتنا خیال تھا
کبھی موسموں کے سراب میں کبھی پام و در کے عزاب میں
وہاں عمر میں نے گزار دی جہاں سانس لینا محال تھا۔
—–
آسان تو نہیں اپنی ہستی سے گزر جانا
اترا جو سمندر میں دریا تو بہت رویا
جو شخص نہ رویا تھا تپتی راہوں میں
دیوار کے سائے میں بیٹھا تو بہت رویا

—–
ab kuch roman urdu mein hain jis ko mujhey urdu mein transfer kerna ka koi dil nahi hai, so please bear it.
—–
Faislay ki raat hai aur lab khamosh hain
aisa bhi kia howa hai keh sab khamosh hain

sar-bazm kion bhar ayein meri ankhain
main kia kahon ke saray hi sabab khamosh hain

apni safai main tu sabhi ney kuch na kuch kaha
baat mujh per ayei hay tu sab khamosh hain

lazim tu nahi honton hi say har baat kahi jaye
ankhon main meri jhank lo, woh kab khamosh hain?

main nay suna tha gulshan mein bahar ayei hay
phool, chirya, fizayein kion ab khamosh hain?
—–
kaha sathi koi dukh dard ka tayar karna hay
jawab aya yeh darya akeley par karna hay

kaha rasta baksha hay na hamwar kion mujh ko
jawab aya tujhey har rasta hamwar karna hay
—–
Last but not the least..

TuuTe huye dilo.n kii duaa mere saath hai
duniyaa terii taraf hai Khudaa mere saath hai

aaj ke daur me.n ai dost ye ma.nzar kyuu.N hai
zaKhm har sar pe har ik haath me.n patthar kyuu.N hai

jab haqiiqat hai ke har zarre me.n tuu rahataa hai
phir zamii.n par kahii.n masjid kahii.n ma.ndir kyuu.N hai

apanaa a.njaam to maaluum hai sab ko phir bhii
apanii nazaro.n me.n har insaan sika.ndar kyuu.N hai

zindagii jiine ke qaabil hii nahii.n ab “Faakir”
varnaa har aa.Nkh me.n ashko.n kaa sama.ndar kyuu.N hai

دعائوں کی طلبگار
اللہ نگہبان
عائشہ۔

Notice: ob_end_flush(): failed to send buffer of zlib output compression (0) in /home/skdevne/public_html/ayesha/wp-includes/functions.php on line 3735